Daily Mashriq

قبل از الیکشن کریک ڈاؤن: بھارت میں 9 ارب روپے کی نقدی اور منشیات ضبط

قبل از الیکشن کریک ڈاؤن: بھارت میں 9 ارب روپے کی نقدی اور منشیات ضبط

بھارتی حکام نے ووٹ کی خریداری کی روک تھام کے لیے خصوصی قانون کے تحت 7 کروڑ ڈالر (9 ارب 80 کروڑ روپے) مالیت کی نقدی، شراب اور غیر قانونی منشیات ضبط کرلیں۔

واضح رہے کہ 11 اپریل سے شروع ہونے والے بھارت کے انتخابات میں تقریبا 90 کروڑ افراد اپنا حق رائے دہی استعمال کرسکیں گے۔

10 مارچ کو انتخابات کے اعلان کے بعد سے ان خصوصی قوانین کا اطلاق ہوگیا تھا جس کے تحت تمام بھارتی شہریوں کو بھاری تعداد میں نقد، سونا چاندی لے کر سفر کرنے پر پابندی عائد ہوتی ہے۔

اس پابندی کا مقصد سیاستدانوں کی جانب سے انتخابات میں ووٹوں کی خریداری کے خدشات کو کم کرنا ہے۔

پولیس اور ریلوے اسٹاف کو عارضی اختیارات دیے جاتے ہیں کہ شراب، نقد و دیگر اشیا جن سے ووٹر خریدے جاسکیں، کو ضبط کیا جائے۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق اب تک حکام نے 44 لاکھ لیٹر شراب اور 1.5 ارب روپے نقدی کو مشتبہ قرار دیتے ہوئے ضبط کیا گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ تقریباً اتنی ہی مالیت کی غیر قانونی منشیات بھی ضبط کی گئی ہیں۔

ان کے مطابق ہائی وے پر ٹرکوں سے 12 کروڑ روپے مالیت کی اشیا بھی ضبط کی گئی ہیں تاہم انہوں نے ان اشیا کے حوالے سے تفصیلات نہیں بتائیں لیکن ماضی میں سیاسی جماعتیں موبائل فونز، ٹیلی ویژن اور دیگر برقی آلات کو ووٹ خریدنے کے لیے استعمال کرتی رہی ہیں۔

سیاستدانوں کی جانب سے انتخابات کے دوران غریب ووٹرز کو نشانہ بنایا جاتا ہے اور انہیں نقد اور دیگر سامان فراہم کرکے حق رائے دہی میں متاثر ہونے کی کوشش کی جاتی ہے۔

ان اقدامات کو روکنے کے لیے خصوصی قوانین کا اطلاق ہوتا ہے جس کے تحت ایک کلو یا اس سے زائد سونا یا چاندی اور 10 لاکھ روپے سے زائد نقدی لے کر سفر کرنے پر پابندی عائد ہوتی ہے۔

متعلقہ خبریں