Daily Mashriq

بھارت کے یومِ جمہوریہ پر کشمیریوں کا احتجاج

بھارت کے یومِ جمہوریہ پر کشمیریوں کا احتجاج

دنیا بھر میں کشمیریوں نے بھارتی یوم جمہوریہ کو یومِ سیاہ کے طور پر منایا۔ مقبوضہ کشمیر میں مکمل ہڑتال رہی ‘ بھارتی فوج نے مزید دو کشمیری نوجوانوں کو شہید کر دیا اور حریت رہنماؤں کو نظر بند رکھا۔ آزاد کشمیر میں بھی ڈویژنل ہیڈ کوارٹر میں احتجاج منعقد ہوئے ۔ لاہور پریس کلب کے سامنے نوجوانوں کی دو تنظیموں نے احتجاج کیا۔ کشمیریوں کے یہ احتجاج اور ان کی حمایت کی یہ کارروائیاں اب بھارت کے اہم دنوں پر معمول کی کارروائیاں بن چکی ہیں۔ پاکستان کشمیریوں کے حق خود ارادیت کا حامی ہے ۔ ان کی اخلاقی‘ سیاسی اور سفارتی حمایت کے وعدے کا پابند ہے لیکن کشمیریوں کے ساتھ اظہارِ یکجہتی کے لیے اس بار دفتر خارجہ کی طرف سے کوئی کارروائی نظر نہیں آئی۔ یہ تاثر قائم ہوتا ہوا نظر آتا ہے کہ گویا کشمیریوں کی سیاسی ‘ اخلاقی اور سفارتی مدد کی علمبرداری کے باوجود انہیں تنہا چھوڑ دیا گیا ہے۔ یہ ٹھیک ہے کہ پاکستان کی طرف سے وقتاً فوقتاً کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار ہوتا رہا ہے۔ لیکن بھارت کی کشمیریوںکا حوصلہ توڑنے کے لیے رفتہ رفتہ مظالم کی پالیسی تقاضا کرتی ہے کہ پاکستان کی طرف سے بین الاقوامی کمیونٹی کو اس بہیمانہ رویے کے خلاف فعال تر کرنے کے لیے نئی حکمت عملی اختیار کی جائے۔ اقوام متحدہ اور دوسرے بین الاقوامی ایوانوں کو باخبر رکھنے کی کوششیں اپنی جگہ لیکن عالمی رائے عامہ کو بھارتی مظالم سے آگاہ کرنے اور انہیں رکوانے کے لیے منظم کرنے کی ضرورت ہے۔ اس کے لیے ضروری ہے کہ دنیا بھر میں مقیم کشمیریوں کو اپنے اپنے ملک کی کمیونٹی کو آگاہ کرنے اور بھارتی مظالم کے خلاف منظم کرنے کے لیے ہر ممکن مدد دی جائے۔

متعلقہ خبریں