Daily Mashriq

بین الاقوامی فلائٹ سے قبل پی آئی اے پائلٹ پر نشے کا شبہ غلط ثابت ہو گیا

بین الاقوامی فلائٹ سے قبل پی آئی اے پائلٹ پر نشے کا شبہ غلط ثابت ہو گیا

راولپنڈی: گزشتہ ہفتے اسلام آباد انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر نشے کے زیر اثر ہونے کے شبے میں فلائٹ آپریشن سے روکے جانے والے پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائن(پی آئی اے) کے پائلٹ کا نجی لیبارٹری سے کرایا گیا الکہل ٹیسٹ منفی آیا ہے۔

برمنگھم کے لیے پی آئی اے کی فلائٹ PKA-785 میں کل 11 بچوں سمیت 288 مسافر تھے اور اس کی روانگی سے قبل پائلٹ سانس کے ٹیسٹ میں ناکام ہو گیا تھا۔

سول ایوی ایشن اتھارٹی نے اپنی رپورٹ میں کہا کہ معمول کے مطابق کیے گئے الکہل ٹیسٹ میں کیپٹن پیر عمر خیام کا الکہل ٹیسٹ مثبت آیا تھا، یہ ٹیسٹ اسلام آباد انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر 21 مارچ 2019 کو ڈاکٹر فرحانہ بدر نے دن کے ساڑھے 11بجے کیا تھا جس کے تحت خون میں الکہل کی مقدار 0.12مِل تھی۔

15منٹ بعد ایک نئے آلے کے ساتھ یہ ٹیسٹ دوبارہ کیا گیا اور یہ پھر مثبت آیا لیکن لیکن اس موقع پر خون میں الکہل کی مقدار کم ہو کر 0.09مِل ہو گئی تھی۔

پروٹوکول اور اصول کے مطابق سول ایوی ایشن کے ڈاکٹر ناصر زرین اور ڈاکٹر نوید اقبال جنجوعہ کی موجودگی میں پائلٹ کو طیارے سے آف لوڈ کردیا گیا۔

رپورٹ کے مطابق دونوں ڈاکٹرز پائلٹ کو لے کر راولپنڈی کی ایک لیبارٹری میں گئے جہاں دو گھنٹے بعد الکہل اور دیگر چیزوں کے ٹیسٹ کیے گئے ، اس تمام عمل کے دوران کیپٹن مکمل ہوش میں تھے اور انہوں نے بھرپور تعاون کیا۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ کیپٹن کا الکہل اور دیگر سائکو ایکٹو اشیا کا ٹیسٹ منفی آیا، محفوظ شدہ نمونوں کا 22مارچ کو کراچی کے آغا خان ہسپتال میں یہ ٹیسٹ دوبارہ کیے گئے اور یہ اس موقع پر بھی منفی آئے۔

سول ایوی ایشن کی رپورٹ میں کہا گیا کہ سانس کا تجزیہ کرنے والی رپورٹ میں دونوں مواقعوں پر مثبت ٹیسٹ آیا جو غلط ثابت ہوا اور انہیں کبھی بھی حتمی تصور نہیں کیا جا سکتا، اس کے بعد الکہل کے لیے خون اور پیشاب کےساتھ دیگر سائکو ایکٹو اشیا کے ٹیسٹ بھی کیے جاتے ہیں تاکہ فلائٹ کا تحفظ یقینی بنایا جا سکے۔

سول ایوی ایشن کے ڈائریکٹر ایڈیشنل ڈائریکٹر آف ایرو میڈیکلاور ایوی ایشن میڈیسن کے سربراہ ڈاکٹر سجاد احمد آفریدی کی جانب سے جاری کردہ خط میں لکھا گیا کہ پائلٹ الکہل کے اثر میں نہیں تھا اور انہیں جو تکلیف اٹھانی پڑی وہ ہمارے ناگزیر روایتی پروٹوکول کا حصہ ہے تاکہ فلائٹ کا تحفظ یقینی بنایا جا سکے۔

برمنگھم کی فلائٹ سے قبل پائلٹ کا الکہل ٹیسٹ مثبت آنے کا معاملہ سامنے آنے کے بعد پی آئی اے انتظامیہ نے بھی اس کا انتہائی سختی سے نوٹس لیا تھا اور پی آئی اے ترجمان کے مطابق پائلٹ کو فوری طور پر گراؤنڈ کر کے تحقیقات کا حکم دے دیا گیا تھا۔

ایئرلائن کے قوانین کے مطابق فلائٹ اڑانے سے 12گھنٹے قبل تک کریو کے اراکین کو الکہل کے استعمال کی اجازت نہیں۔

2013 میں فلائٹ کی اڑان سے قبل نشے کے اثر میں موجود پی آئی اے کے پائلٹ کو برطانوی حکام نے حراست میں لے لیا تھا اور اسے 9ماہ قید کی سزا سنائی گئی تھی

متعلقہ خبریں