Daily Mashriq


مشرقیات

مشرقیات

قرون وسطیٰ میںمسلم خلفاء اور ایوبی سلاطین کیلئے خدمات انجام دینے والے مسلم سپاہی تھے ، جو دراصل غلام تھے ، مگر وقت کے ساتھ ساتھ وہ زبردستعسکری قوت بن گئے اور ایک سے زیادہ مرتبہ حکومت بھی حاصل کی ،جن میں مصر کی طاقتور حکومت 1250ء سے 1517ء تک سلطنت ممالیک کے نام سے مشہور ہے ۔ ممالیک غلاموں کو کہا جاتا ہے ۔ بہت سے ممالیک مصر میں اونچے اونچے عہدوں پر فائز تھے ، جبکہ ان میں سے اکثر کی بابت یہ تک پتہ نہ تھا کہ ان کا مالک ہے کون ۔ شیخ الاسلام عزبن عبدالسلام ؒ کے دور تک آتے آتے یہ اقتدار میں بہت اوپر تک پہنچ چکے تھے ، بلکہ حقیقی اقتدار تو تھا ہی ممالیک کے پاس ۔ خود نائب سلطان ایک مملوک تھا ۔ ملٹری کمانڈر سب کے سب مملوک تھے ، بیورو کریسیمملوکوں سے بھری ہوئی تھی۔ شیخ الا سلام عزبن عبدالسلام ؒ مصر کے قاضی القضا ۃ تھے ۔ غیر آزاد شدہ غلام افسروں کی جانب سے کوئی پروانہ آتا ، خرید و فروخت یا نکاح یا جائیداد سے متعلق احکامات آتے تو آپ انہیں یہ کہہ کر لوٹا دیتے کہ یہ ایک غلام کے احکامات ہیں ۔ وہ کوئی بڑے سے بڑا امیر کبیر اور وزیر کیوں نہ ہو ، آپ اس کے احکامات مسترد کر دیتے ۔ پوچھنے پر واضح کرتے : اس غلام کو بیچاجائے گا ۔ پھر آزاد کیا جائے گا ، اس کے بعد اس کے معاملات از قسم خرید و فروخت اور اس کے جاری کردہ احکامات و تصرفات معتبر ہوں گے ۔ اس وقت البتہ یہ غلامی ہی ہے ، جو آزادا نہ خرید و فروخت نہیں کر سکتا ۔

ممالیک (غلام ) جو اقتدار کے نشے میں چور تھے ، یہ سن کر بے حد سیخ پا ہوئے ۔ ان کے لوگ عزبن عبدالسلام ؒ کے پاس آئے اور کہنے لگے : یہ آپ کیا کر رہے ہیں ؟ شیخ الالسلام ؒ نے جواب دیا : ہم نے تمہارے تصرفات کا لعدم قرار دیئے ہیں ۔ اس پر وہ اور بھی بگڑے اور مسئلہ سلطان کے پاس لے کر پہنچے جس پر سلطان کہہ بیٹھا کہ یہ مسئلہ عزبن عبدلسلام ؒ سے متعلقہ نہیں ۔ عز بن عبدالسلام ؒنے سلطان کی یہ بات سنی تو اعلان کیا : میں آج سے اپنے آپ کو عہدہ ٔ قضاء سے معزول کرتا ہوں ۔ عز بن عبدالسلام ؒ کی قوت کا ایک بڑ ا راز یہ تھا کہ آپ سرکاری عہدوں سے بلند تھے ۔ آپ کی قوت کا راز آپ کا کامل ایمان تھا اور آپ کے امر بالمعروف ونہی عن المنکر کا فریضہ سرانجام دینے اور بے با کی سے معاشرے کے اندر حق بیان کرنے نے آپ کو خلق خدا کا محبوب بنادیا تھا۔اس بات نے آپ کو معاشرے کے اندرایک منفرد ترین حیثیت دے ڈالی تھی اور آپ اپنے دور میں عالم اسلام کے عظیم ترین داعی ، امام اور عالم کے طور پر دیکھے جاتے تھے ۔ چنانچہ انہوں نے خود ہی اپنے آپ کو قضا سے معزول کرلیا ۔ اس کے ساتھ ہی شیخ الاسلام عز بن عبدالسلام ؒ نے ایک او راقدام بھی کیا اور وہ یہ کہ اپنا سب مال اسباب جمع کیا اور د و گدھے خریدے ۔ ایک پر آپ کا سب سامان لادا گیا ۔ دوسرے پر آپ کی زوجہ اور بچہ سوار کرایا گیا ۔ یہ چھوٹا سا قافلہ مصر سے روانہ ہوگیا ۔ آپ اپنے اصل وطن شام واپس جارہے تھے ۔

( وحی القلم امراء برائے نیلام عام)

متعلقہ خبریں